گھر کو ٹوٹنے سے بچانے کا راز۔۔۔اصلاحی معاشرتی تحریر

میاں بیوی میں شدید لڑائی ہوئی ۔بیوی نے رونا شروع کر دیا ۔اِتْنے میں گھر کے دروازے پر دستک ہوئی ۔عورت کے کچھ ننھیالی رشتے دار اُس سے ملنے آئے ۔بھائ اور بہنیں بھی ساتھ تھیں

اللہ کا خوف اور ہماری نماز۔۔۔۔اصلاحی تحریر

پوچھا کیوں رو رہی ہیں ؟  کہنے لگی تھوڑی دیر آرام کرنے بیٹھی تھی کہ مجھے آپ لوگوں کی یاد آئ ۔بچپن میں بھائ بہنوں کے ساتھ گھر کے آنگن میں کھیلنا یاد آیا ۔بس زندگی کے حسین بیتے لمحات یاد آگئے تو آنکھ نم ہوگئ ۔
۔
قریب دوسرے روم میں شوہر یہ ساری باتیں سن رہا تھا۔اُسْ کے دل میں عورت کی محبت بڑھ گئ کہ واہ میری بیوی اتنی اچھی کہ گھر کے راز کو گھر میں ہی دفن کردیا ۔ہمارے درمیان پیدا ہونے والی رنجش(ناراضی ) کے بارے میں اپنے بھائی، بہنوں کو اور ننھیالی رشتے داروں کو اِسْ نیک بخت نے کچھ بھی نہیں بتایا ۔

محمد صلى الله عليه وسلم کا امتی۔۔۔ایک دلچسپ واقعہ
۔
ہر عورت کو چاہئے کہ گھر کی رازوں کی حفاظت کرے ۔گھر میں کیا چل رہا ہے ۔نند کے ساتھ لڑائی ہے ؟  ساس غصیلی ھے ؟شوہر  کتنا ٹائم دیتے ہیں ؟کب سوتے ہیں ؟اُسْ کے موبائل میں کس کس کے نمبر سیو ہیں ؟ اِنْ تمام رازوں کو سینے میں دفن کر دیجئے ۔گھر کی رازوں کو ایسے چُھپائیے جیسے قبر مُرْدے کو چُھپا دیتی ہے ۔
۔
بعض عورتیں اپنی سہیلیوں ،بہنوں ،کزنوں سے موبائل پر بات چیت کرتے وقت گھر کے سارے حال الف سے ی تک بتا دیتی ہیں ۔یہ نہایت ہی بری عادت ہے ۔
۔
میاں بیوی کے درمیان نفرت کی منحوس دیوار کھڑی کرنے میں ایک بات یہ بھی ہے کہ بعض عورتیں اپنے شوہر کی ہر بات چاہے وہ خوبی ہو یا خامی ،اچھی ہو یا بری کمی ہو یا کمزوری ہو یا کچھ اور  سب اپنے میکے بتا دیتی ہیں ۔بعض شوہروں کو شکایت کرتے سنا گیا ہے میری کمزوریاں مجھے بعد میں پتا لگتی ہیں سسرال حال پہلے پہنچ جاتی ہے ۔

بے اولاد عورت اور حضرت موسیٰ علیہ السلام اللہ

رزق کے پندرہ دروازے