کمزور کردار والے مشکل سے معاف کرتے ہے۔۔۔ایک دلچسپ واقعہ

بیس سال سے زیادہ جیل میں گزارنے کے بعد بالآخر نیلسن منڈیلا نے جنوبی افریقہ کی صدارت سنبھالی۔  اپنی سیکورٹی ٹیم کے ساتھ شہر کے دورے کے دوران، انہوں نے ایک ہوٹل میں ٹھہرا۔

وہاں انہوں نے دیکھا کہ ایک آدمی اپنے کھانے کا انتظار کر رہا ہے۔  منڈیلا نے اپنے سیکورٹی افسر کو ہدایت کی کہ وہ اس شخص کو ان کے ساتھ اپنی میز پر آنے کی دعوت دیں۔  کھاتے کھاتے اس شخص کے ہاتھ کانپ رہے تھے اور کھانا کھا کر وہ چلا گیا۔

منڈیلا کے سیکیورٹی افسر نے ریمارکس دیے کہ وہ شخص اپنے کانپتے ہاتھوں کی وجہ سے بیمار لگ رہا تھا۔

آزمائش اور مشکل میں بندے سے اللہ کا پیار

منڈیلا نے اسے درست کرتے ہوئے انکشاف کیا کہ یہ شخص اس جیل میں گارڈ تھا جہاں اسے کبھی قید کیا گیا تھا۔یہ مجھ پر شدید تشدد کرتا تھس جب میں پانی مانگتا تو یہ میرے سر پر پیشاب کیا کرتا تھا اس شخص کے کانپتے ہاتھ بیماری کی علامت نہیں تھے، بلکہ اس بات کا خوف تھا کہ منڈیلا اب اس کے ساتھ کیا سلوک کریں گے جب وہ صدر تھے۔

شروع میں، میں نے اس کے خلاف انتقام لینے کی شدید خواہش محسوس کی۔  تاہم، میں نے محسوس کیا ہے کہ انتقام ہماری قوم کے زوال کا باعث بنتا ہے۔  اس کے بجائے صبر اور رحم کی خوبیاں ہمارے پیارے ملک کی تعمیر و ترقی میں اہم کردار ادا کرتی ہیں۔  یہی خوبیاں ترقی کے حقیقی ستون ہیں۔

اس نے ایک گہرا سچ بتاتے ہوئے کہا، "کمزور کردار والے مشکل سے معاف کرتے ہے، جب کہ مضبوط کردار والے آسانی سے معاف کر دیتے ہیں۔”

خدا ہر جگہ موجود ہے۔۔۔۔

بابے کی مشین۔۔۔پاکستان کے ایٹمی پروگرام کے دوران کا انتہائی دلچسپ واقعہ

حق مہر۔۔۔۔۔۔۔۔۔اصلاحی کہانی