بیرسٹر گوہر نے سنی اتحاد کونسل میں اپنے آزاد امیدواروں کی شمولیت کا اعلان کرتے ہوۓ الیکشن کمیشن سے بڑا مطالبہ کر دیا

تحریک انصاف نے سنی اتحاد کونسل میں اپنے آزاد امیدواروں کی شمولیت کا اعلان کر دیا۔  بیرسٹر گوہر نے اس بات پر زور دیا کہ الیکشن کمیشن قانون کے مطابق انہیں مخصوص نشستیں مختص کرے۔  سنی اتحاد کونسل سے اتحاد کا فیصلہ اجتماعی طور پر کیا گیا۔

پریس بریفنگ کے دوران بیرسٹر گوہر نے روشنی ڈالی کہ انتخابات میں تحریک انصاف کے تمام امیدوار کامیاب ہوئے۔  ان کی نامزدگی کے عمل کے گردوپیش حالات کی وجہ سے ابتدائی طور پر آزاد امیدوار تصور کیے جانے کے باوجود، پی ٹی آئی کی طرف سے ان کی مکمل حمایت کی گئی۔  تمام صوبوں میں امیدواروں نے کامیابی حاصل کی۔  الیکشن کمیشن نے انہیں تحریک انصاف کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار کے طور پر تسلیم کیا۔

پاکستان پیپلز پارٹی نے سندھ میں وزیر اعلیٰ کے لیے نام فائنل کر لیا

بیرسٹر گوہر نے بتایا کہ 16، 17 اور 18 فروری کو تین نوٹیفکیشن جاری کیے گئے ہیں، جن میں آزاد کو تین دن کے اندر پارٹی میں شامل ہونے کی ضرورت ہے۔  انہوں نے مولانا علامہ ناصر اور حامد رضا کی حمایت پر اطمینان کا اظہار کیا۔  مشاورتی اجلاس ہوا جس میں ملک اور جمہوریت کی بہتری کے لیے اتحاد پر زور دیا گیا۔  قومی اور صوبائی اسمبلیوں سے کامیاب ہونے والے تمام امیدوار سنی اتحاد کونسل سے اتحاد کریں گے۔

پی ٹی آئی کا مجلس وحدت المسلمین کی بجائے سنی اتحاد کونسل کے ساتھ اتحاد کا اہم فیصلہ

مجلس وحدت المسلمین میں شامل ہونے سے تحریک انصاف کو کیا نقصانات ہو سکتے ہے

مسلم لیگ (ن) کا پنجاب میں رانا ثناء اللہ کو بڑا عہدہ دینے کا فیصلہ

مسلم لیگ ن نے کریم آن لائن ٹیکسی سروس کے خلاف بائیکاٹ کی تحریک کیوں شروع کر دی