پی ٹی آئی کا مجلس وحدت المسلمین کی بجائے سنی اتحاد کونسل کے ساتھ اتحاد کا اہم فیصلہ

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) نے مجلس وحدت المسلمین (ایم ڈبلیو ایم) کے بجائے سنی اتحاد کونسل کے ساتھ اتحاد کا اہم فیصلہ کیا ہے۔  یہ فیصلہ سنی اتحاد کونسل نے متفقہ طور پر کیا ہے اور اس کا باضابطہ اعلان مناسب وقت پر کیا جائے گا۔

پی ٹی آئی کے سینئر عہدیداروں نے تصدیق کی ہے کہ پارٹی پنجاب اور وفاق دونوں میں سنی اتحاد کونسل کے ساتھ اتحاد کرے گی۔  سب مل کر وفاقی اور صوبائی دونوں سطحوں پر حکومت قائم کرنے کی کوشش کریں گے۔

مجلس وحدت المسلمین میں شامل ہونے سے تحریک انصاف کو کیا نقصانات ہو سکتے ہے

اس اتحاد کو مستحکم کرنے کے لیے پی ٹی آئی کے منتخب اراکین سنی اتحاد کونسل کا حصہ بنیں گے۔  یہ طریقہ وفاق اور پنجاب دونوں میں لاگو کیا جائے گا۔

پی ٹی آئی اور سنی اتحاد کونسل کے آزاد ارکان کے درمیان اس تعاون کے نتیجے میں پی ٹی آئی میں خواتین اور اقلیتوں کے لیے مخصوص نشستیں ہوسکتی ہیں۔

پی ٹی آئی کے سینئر رہنماؤں نے اردو نیوز کو بتایا ہے کہ سنی اتحاد کونسل میں شمولیت سے قبل پی ٹی آئی کے آزاد ارکان اسمبلی کو حلف برداری کے بیانات دینے کی ضرورت ہے۔  یہ اقدام ان کی وفاداری کو یقینی بنانے اور وفاداری میں کسی ممکنہ تبدیلی کو روکنے کے لیے اٹھایا جا رہا ہے۔

سنی اتحاد کونسل کے سربراہ صاحبزادہ حامد رضا نے عام انتخابات میں تحریک انصاف کی حمایت سے اپنی نشست پر کامیابی حاصل کی ہے۔  سنی اتحاد کونسل پہلے ہی پی ٹی آئی کی حمایت کا اعلان کر چکی ہے۔

سنی اتحاد کونسل کے رہنما صاحبزادہ حامد رضا نے تصدیق کی ہے کہ پی ٹی آئی اور ان کی کونسل کے درمیان وفاق کے ساتھ ساتھ پنجاب اور دیگر صوبوں میں بھی اتحاد قائم ہو گیا ہے۔

صاحبزادہ حامد رضا کے مطابق پی ٹی آئی اب سنی اتحاد کونسل کے ساتھ اتحاد کرنے کے لیے تیار ہے۔  یہ اتحاد صرف وفاقی سطح تک محدود نہیں ہے بلکہ اس کا دائرہ پنجاب، خیبرپختونخوا اور دیگر صوبوں تک بھی ہے۔

مزید برآں، پاکستان تحریک انصاف اور سنی اتحاد کونسل کے درمیان اتحاد کو حتمی شکل دینے کے لیے دونوں جماعتوں کے رہنماؤں کے درمیان اتوار کو اسلام آباد میں ملاقات ہونے والی ہے۔

اسی کی روشنی میں سنی اتحاد کونسل کے سربراہ صاحبزادہ حامد رضا اسلام آباد پہنچ گئے ہیں۔  اجلاس میں سنی اتحاد کونسل میں آزاد ارکان کی شمولیت پر توجہ دی جائے گی اور اس کے لیے ضروری کاغذی کارروائی مکمل کر لی گئی ہے۔

مسلم لیگ ن نے کریم آن لائن ٹیکسی سروس کے خلاف بائیکاٹ کی تحریک کیوں شروع کر دی

مسلم لیگ (ن) کا پنجاب میں رانا ثناء اللہ کو بڑا عہدہ دینے کا فیصلہ

پاکستان تحریک انصاف نے علیمہ خان کو نیا پی ٹی آئی چیئرمین بنانے کا فیصلہ کر لیا

عمران خان کے خلاف تحریک عدم اعتماد کے مولانا فضل الرحمان کے بیان پر جنرل (ر) قمر جاوید باجوہ کا موقف سامنے آ گیا