کس سیاسی جماعت میں شامل ہونا ہے، بیرسٹر گوہر علی خان نے پلان بتا دیا

نیوز چینل سے بات کرتے ہوئے بیرسٹر گوہر علی خان نے تسلیم کیا کہ وہ اور ان کے ساتھی آزاد ارکان نے ابھی تک یہ فیصلہ نہیں کیا ہے کہ وہ کس سیاسی جماعت میں شامل ہوں۔  انہوں نے کہا کہ یہ اہم فیصلہ اگلے چند دنوں میں کر لیا جائے گا۔

بیرسٹر گوہر نے زور دے کر کہا کہ فی الحال ان کے پاس حکومت قائم کرنے کے لیے ضروری اکثریت کی کمی ہے۔  انہوں نے زور دے کر کہا کہ قومی اسمبلی کی 70 نشستوں پر تنازعہ موجود ہے اور اگر یہ نشستیں ان کے حق میں طے پا گئیں تو پی ٹی آئی قومی اسمبلی میں اکثریت حاصل کر لے گی۔

الیکشن کمیشن کی جانب سے قومی اور صوبائی اسمبلی کی نشستوں کے نتائج کا اعلان

بیرسٹر گوہر خان سے جب کسی جماعت کے ساتھ اتحاد کے امکان کے بارے میں پوچھا گیا تو انہوں نے واضح طور پر کہا کہ وہ اس طرح کا راستہ اختیار نہیں کریں گے۔  اس کے بجائے، وہ اپوزیشن میں رہیں گے، کسی سیاسی جماعت کے ساتھ اتحاد نہ کرنے کا انتخاب کریں گے۔

مزید برآں، انہوں نے واضح کیا کہ ان کا کوئی نئی پارٹی بنانے کا کوئی ارادہ نہیں ہے۔  بلکہ، وہ قومی اسمبلی میں موجودہ پارٹی میں شامل ہونے کا ارادہ رکھتے ہیں، حالانکہ انہوں نے ابھی اپنے فیصلے کو حتمی شکل نہیں دی ہے، جو وہ اگلے دو دنوں میں کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔

گوہر خان نے پارٹی وابستگی کے معاملے پر بات کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ وہ کوئی بھی متنازعہ فیصلہ کرنے سے گریز کریں گے۔

جانیے بھارتی میڈیا پاکستان کے انتخابات کے بارے میں کیا رپورٹنگ کرتا رہا

آصف علی زرداری اور شہباز شریف کے درمیان ہونے والی ملاقات کی اندرونی کہانی سامنے آگئی آصف علی زرداری نے بڑا مطالبہ کر دیا

جانیے انتخابات میں کتنے حلقوں کے رزلٹ عدالت میں چیلنج کیے گئے ہیں

جمعیت علمائے اسلام ف اور گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس کا انتخابی نتائج کے خلاف سندھ بھر میں دھرنے اور احتجاج کا اعلان