آصف علی زرداری اور شہباز شریف کے درمیان ہونے والی ملاقات کی اندرونی کہانی سامنے آگئی آصف علی زرداری نے بڑا مطالبہ کر دیا

سابق صدر آصف علی زرداری اور مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف کے درمیان ہونے والی ملاقات کی تفصیلات سامنے آگئی ہیں جس میں مسلم لیگ (ن) سے اتحاد کے حوالے سے بات چیت پر روشنی ڈالی گئی ہے۔  مستقبل میں مخلوط حکومت بنانے کے لیے پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) نے بلاول بھٹو سے وزارت عظمیٰ کا کردار ادا کرنے کی درخواست کی۔  جمعے کی رات بلاول بھٹو نے مخلوط حکومت کے امکانات کو مزید تلاش کرنے کے لیے مسلم لیگ ن کے رہنماؤں سے ملاقات کی۔

ملاقات میں مسلم لیگ ن کے رہنماؤں نے وفاق اور پنجاب حکومتوں کی تشکیل کے لیے مختلف آپشنز پر غور کیا۔  ہفتہ کو مسلم لیگ (ن) کی قیادت کی جانب سے اجلاس ہوا جس کی صدارت شہباز شریف نے کی۔  اس اجتماع میں سردار ایاز صادق، مریم اورنگزیب، ملک محمد احمد خان، سینیٹر اعظم نذیر تارڑ، عطاء اللہ تارڑ، خواجہ عمران نذیر، اور دیگر کے علاوہ سینیٹر اسحاق ڈار اور خواجہ سعد رفیق جیسی اہم شخصیات موجود تھیں۔

جانیے انتخابات میں کتنے حلقوں کے رزلٹ عدالت میں چیلنج کیے گئے ہیں

شہباز شریف نے اپنی پارٹی کے ارکان کو بتایا کہ سابق صدر آصف زرداری سے بات چیت کا آغاز بلاول بھٹو کو وزیراعظم بنانے اور مرکزی وزارتی قلمدانوں کی تقسیم کے مطالبے سے ہوا۔  آصف زرداری نے پنجاب میں حکومت سازی کے لیے ن لیگ کو حمایت کی پیشکش بھی کی۔  مسلم لیگ ن کے صدر نے حکومت سازی کے لیے مختلف آپشنز پر مزید تبادلہ خیال کیا۔

اس بات کا اعتراف کیا گیا کہ اگرچہ مسلم لیگ (ن) ملک کی سب سے بڑی سیاسی جماعت بن کر ابھری ہے لیکن اسے اب بھی اپنے طور پر حکومت بنانے کے لیے دیگر جماعتوں یا آزاد ارکان کی حمایت درکار ہے۔

جمعیت علمائے اسلام ف اور گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس کا انتخابی نتائج کے خلاف سندھ بھر میں دھرنے اور احتجاج کا اعلان

جانیے عام انتخابات میں ووٹرز ٹرن آؤٹ کتنا رہا، اور ماضی کے انتخابات میں ووٹرز ٹرن آؤٹ کتنا تھا

انتخابی عمل اور انتخابی نتائج پر جانیے عالمی میڈیا کی رپورٹنگ

پاکستان میں 8 فروری کو ہونے والے انتخابات میں اصل میں کتنے آزاد امیدوار کامیاب ہوے ہیں