الیکشن کمیشن نے قومی اسمبلی کے حلقوں کے نتائج کا اعلان کر دیا۔بڑے بڑے سیاسی برج الٹ گئے

الیکشن کمیشن نے قومی اسمبلی کے حلقوں کے نتائج کا اعلان اپنی ویب سائٹ پر کرنا شروع کر دیا ہے تاہم یہ عمل سست رفتاری سے آگے بڑھ رہا ہے۔  موجودہ نتائج کی بنیاد پر مسلم لیگ ن اور آزاد امیدواروں کے درمیان سخت مقابلہ ہے۔

ورژن 1: الیکشن کمیشن آف پاکستان نے اب تک قومی اسمبلی کی 21 نشستوں کے نتائج جاری کر دیے ہیں۔  ان میں سے آزاد امیدواروں نے 8، مسلم لیگ (ن) نے 7، پیپلز پارٹی نے 5 اور پیپلز پارٹی نے ایک نشست حاصل کی ہے۔  تاہم پاکستان مسلم لیگ مجموعی طور پر کامیاب رہی۔

ورژن 2: الیکشن کمیشن کی اپ ڈیٹس کے مطابق، شہباز شریف سمیت مسلم لیگ (ن) کے امیدوار کامیاب ہو گئے ہیں۔  این اے 123 لاہور سے الیکشن لڑنے والے شہباز شریف 63 ہزار 953 ووٹ لے کر کامیاب ہوئے۔  ان کے حریف آزاد امیدوار افضل عظیم نے 48,486 ووٹ حاصل کیے۔  اسی حلقے سے ایک اور امیدوار جماعت اسلامی پاکستان کے لیاقت بلوچ نے 3,207 ووٹ حاصل کیے۔

مایوس کن انتخابی نتائج نواز شریف ناراض ہو کر وکٹری سپیچ کیے بغیر ماڈل ٹاؤن سے چلے گے

ورژن 3: این اے 55 راولپنڈی فور سے پاکستان مسلم لیگ ن کے ابرار احمد 78,542 ووٹ لے کر کامیاب ہوئے۔  اس کے مقابلے میں آزاد امیدوار محمد بشارت راجہ نے 67,101 ووٹ حاصل کیے۔

ورژن 4: این اے 58 چکوال 1 میں مسلم لیگ ن کے امیدوار طاہر اقبال نے شاندار 115,974 ووٹ حاصل کیے۔  آزاد امیدوار ایاز امیر نے 102,537 ووٹ حاصل کیے۔

ورژن 5: این اے 59 طلال گنگکم چکوال میں بھی مسلم لیگ (ن) نے کامیابی حاصل کی، جہاں لیگ کے امیدوار سردار غلام عباس نے 141,680 ووٹ حاصل کیے۔  آزاد امیدوار رومان احمد نے 129,716 ووٹ حاصل کیے۔

ورژن 6: پی ٹی آئی کی حمایت یافتہ آزاد امیدوار شاندانہ گلزار نے این اے 30 پشاور سے کامیابی حاصل کی ہے۔  فارم 47 کے مطابق شاندانہ گلزار نے 78 ہزار 971 ووٹ حاصل کیے۔

این اے 17 ایبٹ آباد 2 سے آزاد امیدوار علی خان جدون 97 ہزار 177 ووٹ لے کر کامیاب ہوئے۔  دوسری جانب مسلم لیگ ن کے پیارے خان 44 ہزار 522 ووٹ لے کر کامیاب ہوئے۔

NA-3 سوات-2 میں ایک اور آزاد امیدوار سلیم رحمان نے 81,411 ووٹ لے کر کامیابی حاصل کی۔  مسلم لیگ ن کے واجد علی خان 27 ہزار 861 ووٹ لے کر پیچھے ہیں۔

بدقسمتی سے امیر حیدر اعظم خان کو شکست کا سامنا کرنا پڑا۔

قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 22 مردان سے آزاد امیدوار محمد عاطف نے شاندار 114,748 ووٹ حاصل کرکے کامیابی حاصل کی۔  اس کے مقابلے میں عوامی نیشنل پارٹی کے امیر حیدر اعظم خان صرف 66,159 ووٹ حاصل کر سکے۔

افسوس کہ روحیل اصغر کو شکست ہوئی۔

این اے 121 لاہور میں آزاد امیدوار وسیم قادر نے ن لیگ کے روحیل اصغر کو شکست دے کر کامیابی حاصل کی۔  وسیم قادر نے 78 ہزار 703 ووٹ حاصل کیے جب کہ روحیل اصغر نے 70 ہزار 597 ووٹ حاصل کیے۔

امل ولی خان کو بھی مایوسی کا سامنا کرنا پڑا۔

این اے 25 چارسدہ میں آزاد امیدوار فضل محمد خان نے عوامی نیشنل پارٹی کے ایمل ولی خان کو شکست دے کر کامیابی حاصل کی۔  فضل محمد خان نے قابل ذکر 171,300 ووٹ حاصل کیے جب کہ امل ولی خان 67,876 ووٹ حاصل کرنے میں کامیاب رہے۔

پی ٹی آئی کے رہنما بیرسٹر گوہر علی خان نے حکومت بنانے کے حوالے سے بڑا اعلان کر دیا

ایک مثبت نوٹ پر، پاکستان پیپلز پارٹی پارلیمنٹرینز (پی پی پی) کے امیدوار این اے 199 گھوٹکی سے کامیاب ہوئے۔  علی گوہر خان مہر نے 154,832 ووٹ حاصل کرکے اپنے حریف کو نمایاں فرق سے شکست دی۔  جمعیت علمائے اسلام پاکستان کے عبدالقیوم نے 40,204 ووٹ حاصل کیے۔

مسلم لیگ ن کے بشیر احمد کو بھی الیکشن میں شکست کا سامنا کرنا پڑا۔

این اے 216 مٹیاری سے پاکستان پیپلز پارٹی پارلیمنٹرینز کے مخدوم جمیل الزماں 124,536 ووٹ لے کر کامیاب ہوئے۔  دوسری جانب مسلم لیگ ن کے بشیر احمد نے 80 ہزار 439 ووٹ حاصل کیے۔

صفدر عباسی کو بھی الیکشن میں نقصان اٹھانا پڑا۔

این اے 195 لاڑکانہ سے پیپلز پارٹی کے امیدوار نذیر احمد بگھیو ایک لاکھ 33 ہزار 830 ووٹ لے کر کامیاب ہوئے۔  تاہم گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس (جی ڈی اے) کے صفدر عباسی صرف 48 ہزار 893 ووٹ حاصل کر سکے۔

پیپلز پارٹی کے امیدوار صادق علی میمن نے کامیابی حاصل کی۔

قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 225 ٹھٹھہ سے پاکستان پیپلز پارٹی پارلیمنٹیرینز کی نمائندگی کرنے والے صادق علی میمن مجموعی طور پر 140773 ووٹ لے کر کامیاب ہوئے۔  مسلم لیگ ن کے رسول بخش جکھڑو 28 ہزار 899 ووٹ لے کر دوسرے نمبر پر رہے۔

خیبرپختونخوا اسمبلی

ترجمان الیکشن کمیشن کے مطابق پی کے 76 سے آزاد امید اور سمیع اللہ خان 18 ہزار 888 ووٹ لے کر کامیاب ہوئے۔  پی کے 76 میں ڈالے گئے ووٹوں کی شرح 37 فیصد رہی۔

الیکشن کمیشن کے ترجمان نے اعلان کیا کہ پی کے 6 سوات 4 سے فضل حکیم خان 25 ہزار 330 ووٹ لے کر کامیاب ہوئے۔

الیکشن کمیشن نے پی کے 4 سوات 2 کے غیر حتمی نتیجے کا بھی اعلان کر دیا۔آزاد امیدوار علی شاہ 30,022 ووٹ لے کر کامیاب قرار پائے جبکہ مسلم لیگ ن کے سردار خان 12,514 ووٹ لے کر دوسرے نمبر پر رہے۔

الیکشن کمیشن کے مطابق پی کے 19 باجوڑ سے آزاد امیدوار حمید الرحمان 23 ہزار 44 ووٹ لے کر کامیاب ہوئے۔  دوسرے آزاد امیدوار خالد خان 13571 ووٹ لے کر دوسرے نمبر پر رہے۔

بلوچستان اسمبلی

الیکشن کمیشن نے بلوچستان اسمبلی کی ایک نشست کے سرکاری نتائج کا اعلان کر دیا جس میں جمعیت علمائے اسلام پاکستان فاتح بن کر سامنے آئی۔

پی ٹی ائی کے حمایت یافتہ ازاد امیدواروں کا خیبرپختونخوا میں کلین سویپ

بلوچستان اسمبلی کے حلقہ پی بی 34 نوشکی سے جمعیت علمائے اسلام پاکستان کے امیدوار 16 ہزار 771 ووٹ لے کر کامیاب ہوئے جب کہ بلوچستان نیشنل پارٹی کے امیدوار نے 15 ہزار 14 ووٹ حاصل کیے۔