ایران میں 9 پاکستانیوں کے قتل پر ایران کا تحقیقات کرنے کا اعلان

ایران میں 9 پاکستانیوں کے قتل پر ایران کا تحقیقات کرنے کا اعلان

 

 

ایران نے جنوب مشرقی صوبے میں نو پاکستانی شہریوں کے قتل کی تحقیقات کا آغاز کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا ہے کہ وہ پاکستان کے ساتھ اپنے برادرانہ تعلقات کو کوئی نقصان برداشت نہیں کرے گا۔

ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان نے اپنے ملک میں پیش آنے والے افسوس ناک واقعے کا اعتراف کرتے ہوئے پاکستان کے عوام اور حکومت سے تعزیت کا اظہار کیا۔

ایران میں پاکستانی سفیر اور انسانی حقوق کی ایک تنظیم نے اطلاع دی ہے کہ ہلاک ہونے والے پاکستانی شہری تھے جو ایران کے شورش زدہ جنوب مشرقی سرحدی علاقے سراوان میں گاڑیوں کی مرمت کی ایک ورکشاپ میں کام کر رہے تھے اور رہائش پذیر تھے۔

پاکستان نے واقعے کی شدید مذمت کرتے ہوئے فوری تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔  ایرانی وزارت خارجہ نے کہا کہ حکام اس معاملے کی تحقیقات کر رہے ہیں۔  ایران اور پاکستان دونوں اپنے قریبی تعلقات کو کسی بھی بیرونی خطرات سے محفوظ رکھنے کے لیے پرعزم ہیں۔

غور طلب ہے کہ یہ واقعہ دونوں ممالک کے سفیروں کے اپنے اپنے ملکوں کو واپس آنے کے فوراً بعد پیش آیا۔  دو ہفتے قبل پاکستان اور ایران کے درمیان سفارتی تعلقات سرحد پار سے مبینہ عسکریت پسندوں کے ٹھکانوں کو نشانہ بنانے والے میزائل حملوں کی وجہ سے عارضی طور پر معطل ہو گئے تھے۔  کبھی کبھار سرحد پار سے حملوں کے باوجود، دونوں حکومتوں نے دونوں ممالک کے درمیان بڑھتی ہوئی کشیدگی کو کم کرنے کے لیے تیزی سے اقدامات کیے ہیں۔