عالمی عدالت انصاف کے فیصلے کے بعد اسرائیل کا جنوبی افریقہ کے خلاف بڑا اقدام

عالمی عدالت انصاف کے فیصلے کے بعد اسرائیل کا جنوبی افریقہ کے خلاف بڑا اقدام

 

جنوبی افریقہ کی جانب سے اسرائیل کے خلاف غزہ میں نسل کشی کا مقدمہ چلانے کی درخواست کو عالمی عدالت انصاف نے قبول کر لیا ہے۔  نتیجے کے طور پر، اسرائیلی ایئر لائن نے مارچ کے آخر سے جوہانسبرگ کے لیے پروازیں معطل کرنے کا اعلان کیا ہے۔  یہ فیصلہ اسرائیلیوں کی طرف سے مانگ میں کمی کی وجہ سے کیا گیا ہے جو جاری ICJ کیس کے درمیان جنوبی افریقہ کا سفر کرنے سے گریزاں ہیں۔

یہ امر اہم ہے کہ جنوبی افریقہ نے بین الاقوامی عدالت انصاف میں اسرائیل پر اقوام متحدہ کے نسل کشی کنونشن کی خلاف ورزی کا الزام لگایا تھا۔  امریکہ نے اپنے فیصلے میں کہا ہے کہ عدالت کو نسل کشی کنونشن کے تحت غزہ میں اسرائیل کی مبینہ نسل کشی کے معاملے پر دائرہ اختیار حاصل ہے۔

فیصلے نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ اسرائیل کی طرف سے غزہ میں فلسطینیوں کے خلاف نسل کشی کے کچھ الزامات درست ثابت ہوئے ہیں۔  جنوبی افریقہ کے دلائل کے قانونی وزن کے پیش نظر اسرائیل کے خلاف مقدمہ خارج نہیں کیا جائے گا۔  مزید برآں، عالمی عدالت انصاف کو نسل کشی کے مقدمے کے حتمی فیصلے تک پہنچنے سے پہلے ہی فوری اقدامات کرنے کا اختیار حاصل ہے۔

اسرائیل نے حماس کے ساتھ جنگ ​​بندی اور قیدیوں کے تبادلے کے لیے چھ شرائط پیش کر دی

اس اختیار کو بروئے کار لاتے ہوئے بین الاقوامی عدالت انصاف نے بھی اسرائیل کو نسل کشی کی کارروائیوں سے روک دیا ہے اور اپنے فوجیوں کے خلاف الزامات کی ہنگامی تحقیقات کا حکم دیا ہے۔  مزید برآں، اسرائیل کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ انسانی امداد کی رسائی میں رکاوٹیں کھڑی کرے۔  بین الاقوامی عدالت انصاف کے صدر نے اس بات پر زور دیا کہ فلسطینیوں کو نسل کشی مخالف قوانین کے تحت تحفظ حاصل ہے کیونکہ اسرائیل کے فوجی اقدامات سے شہری آبادی کو بہت نقصان پہنچا ہے۔

امریکی قاتل کو تاریخ کی سب سے اذیت ناک نائٹروجن گیس سے پھانسی

سعودی عرب دارالحکومت ریاض میں غیر مسلم سفارت کاروں کے لیے شراب خانہ کھولنے کی تیاریاں

ایودھیا میں رام مندر کا افتتاح اور مسلمانوں کی حالت زار