عمران خان کونسی ڈیل کرنا چاہتے ہے، خود ہی بتا دیا

عمران خان کونسی ڈیل کرنا چاہتے ہے، خود ہی بتا دیا

 

 

راولپنڈی کی اڈیالہ جیل میں عدالت میں صحافیوں سے غیر رسمی گفتگو کے دوران پی ٹی آئی کے بانی عمران خان نے وفاقی حکومت کی نگرانی میں 9 مئی کے واقعات کی تحقیقات پر عدم اطمینان کا اظہار کیا۔  انہوں نے آزادانہ تحقیقات کی ضرورت پر زور دیا۔

عمران خان نے جی ایچ کیو، جناح ہاؤس اور دیگر سہولیات سے چوری ہونے والی سی سی ٹی وی فوٹیج کے معاملے پر بھی بات کی، ان کا کہنا تھا کہ ذمہ داروں کی گرفتاری کے لیے نگراں حکومت، اسٹیبلشمنٹ اور الیکشن کمیشن کو مل کر کام کرنا چاہیے۔  انہوں نے کسی بھی گرفتاری سے قبل آزادانہ تحقیقات کرنے کی اہمیت پر زور دیا۔

پی ٹی آئی کے بانی عمران خان اور اڈیالہ جیل کے سپرنٹنڈنٹ کے درمیان تلخ کلامی

مزید برآں عمران خان نے دعویٰ کیا کہ کور کمانڈر ہاؤس لاہور، جی ایچ کیو اور اسلام آباد ہائی کورٹ سے سی سی ٹی وی فوٹیج پراسرار طور پر غائب ہوگئی ہے۔  انہوں نے ان ویڈیوز کا ذکر کیا جس میں یاسمین راشد کو کارکنوں کو کور کمانڈر ہاؤس کے قریب جانے سے روکتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔

عمران خان نے زور دے کر کہا کہ 80 فیصد فوج پی ٹی آئی کی حمایت کرتی ہے اور انہیں شکست نہیں دی جا سکتی۔  انہوں نے مبینہ پری پول دھاندلی کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ تاریخ میں ایسی ہیرا پھیری کبھی نہیں ہوئی۔  انہوں نے اس یقین کا بھی اظہار کیا کہ 8 فروری کو عوام کا غصہ واضح ہو جائے گا۔

عمران خان سے جب ان کے اہداف کے بارے میں پوچھا گیا تو انہوں نے کہا کہ ان کا واحد ڈیل منصفانہ اور شفاف انتخابات کو یقینی بنانا اور جمہوریت کو فروغ دینا ہے۔  انہوں نے ملک کو نقصان پہنچانے والے اقدامات کے خلاف خبردار کیا اور اس بات پر زور دیا کہ یہ صرف الیکشن نہیں ہے بلکہ آزادی کی جدوجہد ہے۔  انہوں نے پوسٹل بیلٹ کے لیے درخواست دینے کا ذکر کیا۔

پی ٹی آئی کے بانی عمران خان کے خلاف توشہ خانہ ریفرنس میں ہندوستانی کمپنی کے سیلز مین کا بیان ریکارڈ

دفعہ 144 کے نفاذ کے حوالے سے عمران خان نے دعویٰ کیا کہ انتخابی مہم شروع کرنے کے لیے اتوار کو ان کے بیان کے بعد یہ انتخابی طور پر نافذ کیا گیا تھا۔  انہوں نے قیاس کیا کہ دفعہ 144 پی ٹی آئی کی جانب سے نواز شریف کے خلاف استعمال کی جائے گی، ان کے جلسوں اور ریلیوں میں رکاوٹ ڈالی جائے گی۔

نواز شریف کے جلسوں میں حاضری نہ ہونے کے برابر ہے، پی ٹی آئی کے نعروں سے فضا حاوی ہے۔  نواز شریف خود گھر پر ہیں، یہ دعویٰ کر رہے ہیں کہ انہیں منتخب کیا جا رہا ہے۔  نتیجتاً ایسا لگتا ہے کہ کسی مہم کی ضرورت نہیں ہے۔

عمران خان نے امیدواروں کو تیار رہنے کا پیغام دیا ہے۔  انہوں نے یقین دلایا کہ جس کو بھی وہ پکڑیں ​​گے، وہ اس کی جگہ کسی اور امیدوار کو لے آئیں گے۔  عوام کا خوف واضح ہے، کیونکہ ہمارے امیدواروں کو میری تصویر لگانے کی بھی اجازت نہیں ہے۔  مزید یہ کہ انہیں قیدی نمبر 804 لکھنے سے منع کیا گیا ہے۔

تحریک انصاف کو ایسی صورتحال کا سامنا کرنا حیران کن ہے جو اس سے پہلے کسی اور سیاسی جماعت کو نہیں ہوا۔  ہم ان لوگوں سے درخواست کر رہے ہیں جو ہماری پارٹی سے وابستہ نہیں ہیں ہماری تصویر آویزاں کریں۔

پی ٹی آئی کے بانی نے انکشاف کیا ہے کہ انہوں نے ووٹ کا حق استعمال کرنے کے لیے جیل سے پوسٹل بیلٹ کے لیے درخواست دی ہے۔  کسی کے ساتھ کوئی خفیہ ڈیل نہیں ہیں۔  ہماری واحد ڈیل ملک میں منصفانہ اور شفاف انتخابات کو یقینی بنانا ہے۔

سائفر کیس میں سابق پرنسپل سیکرٹری اعظم خان نے بیان قلمبند کروا دیا،عمران خان کا قرآن پر ہاتھ رکھ کر بیانات دینے کا مطالبہ

شیخ رشید سے مبینہ ملاقات کے حوالے سے عمران خان نے واضح کیا کہ جیل میں ایسی کوئی ملاقات نہیں ہوئی۔  وہ اس بات پر زور دیتا ہے کہ اسے حراست میں لیا گیا ہے۔

پی ٹی آئی کے بانی عمران خان نے نواز شریف پر بڑی پابندی لگانے کا مطالبہ کر دیا

عمران خان اور بشریٰ بی بی کے لیے اچھی خبر آ گئ،عدالت نے بڑا کیس ختم کر دیا