پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی (PTA) نے نئی سم کی ایکٹیویشن کے طریقہ کار میں تبدیلی کر دی

پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی (PTA) نے نئی سم کی ایکٹیویشن کے طریقہ کار میں تبدیلی کر دی

 

 

پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی (PTA) نے حال ہی میں غیر قانونی سم کے اجراء اور ایکٹیویشن کے مسئلے سے نمٹنے کے لیے نئے معیاری آپریٹنگ طریقہ کار (SOPs) کو نافذ کیا ہے۔

نظرثانی شدہ رہنما خطوط کے مطابق، اسی نام سے دوسری سم کو چالو کرنے میں اب آٹھ گھنٹے کے سابقہ ​​ٹائم فریم کے بجائے سات دن لگیں گے۔  تاہم، پہلی نئی سم کا اجراء اور ایکٹیویشن اب بھی 8 گھنٹے کے اندر مکمل ہو جائے گا۔  مزید برآں، ڈپلیکیٹ سم کارڈ یا نمبر بھی 8 گھنٹے کے اندر جاری کیے جائیں گے۔

نگراں وزیر اعلیٰ پنجاب محسن نقوی کو ایک اور بڑا عہدہ دینے کا فیصلہ

یہ اپ ڈیٹ کردہ SOPs 24 جنوری سے لاگو ہوں گے اور تمام آپریٹرز، کسٹمر سروس سینٹرز، فرنچائزز اور ریٹیلرز پر لاگو ہوں گے۔  نیشنل ڈیٹا بیس اینڈ رجسٹریشن اتھارٹی (نادرا) بھی ان نئے طریقہ کار کو اپنے سسٹم میں شامل کرے گی۔

ایس او پیز پر نظر ثانی کا فیصلہ ایک ہی دن میں متعدد سموں کے غلط استعمال کے جواب میں کیا گیا۔  اس عمل میں اکثر جعلی فنگر پرنٹس کا استعمال، جعلی واٹس ایپ اکاؤنٹس کی تنصیب اور کسی اور کے نام پر سم جاری کرنا شامل ہوتا ہے۔  ان نئے ایس او پیز پر عمل درآمد کرتے ہوئے، پی ٹی اے کا مقصد سم کارڈز سے متعلق جعل سازی اور فراڈ کے واقعات کو کم کرنا ہے۔

پاکستان اور ایران کے وزرائے خارجہ کے درمیان ٹیلی فونک رابطہ، 26 جنوری تک سفیر واپس بلانے پر اتفاق