ایران اور پاکستان کے درمیان حالیہ فضائی حملوں پر امریکہ کا بیان آ گیا

ایران اور پاکستان کے درمیان حالیہ فضائی حملوں
فوٹو بشکریہ گوگل امیجز

ایران اور پاکستان کے درمیان حالیہ فضائی حملوں پر امریکہ کا بیان آ گیا

 

ایران اور پاکستان کے درمیان حالیہ فضائی حملوں
فوٹو بشکریہ گوگل امیجز

 

امریکی صدر جو بائیڈن نے ایران اور پاکستان کے درمیان حالیہ فضائی حملوں پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ خطے میں ایران کی مقبولیت کی کمی کو ظاہر کرتا ہے۔

برطانوی خبر رساں ایجنسی رائٹرز نے رپورٹ کیا کہ پاکستان نے ایران کے اندر علیحدگی پسند عسکریت پسندوں کے خلاف جوابی حملے کیے ہیں۔  یہ حملے ایران کی جانب سے پاکستانی سرزمین پر حملے کے دو دن بعد ہوئے ہیں، جس میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ اس نے ایک "دہشت گرد گروپ” کے ٹھکانے کو نشانہ بنایا ہے۔

آپریشن مارگ بر سرمچار کیا ہے اور اس میں کن لوگوں کو نشانہ بنایا گیا

صدر بائیڈن نے تسلیم کیا کہ خطے میں ایران کی ساکھ سازگار نہیں ہے اور اس صورتحال کے مستقبل کے مضمرات کا ابھی اندازہ لگایا جا رہا ہے۔  وائٹ ہاؤس نے پاکستان اور ایران کے درمیان کشیدہ صورتحال پر بھی توجہ دی ہے،

قومی سلامتی کونسل کے ترجمان جان کربی نے دونوں ممالک پر زور دیا ہے کہ وہ مزید کشیدگی سے گریز کریں۔  امریکہ صورتحال پر گہری نظر رکھے ہوئے ہے اور جنوبی ایشیا اور وسطی ایشیا میں کشیدگی میں اضافے کو روکنے کے لیے متعلقہ پاکستانی حکام کے ساتھ رابطے میں ہے۔

جانیے پاکستان اور ایران کے درمیان کشیدگی پر عالمی برادری کا رد عمل