تاریخ میں پہلی بار غیر مسلموں کا مسجد نبوی کا دورہ

مسجد نبوی
فوٹو بشکریہ گوگل امیجز

تاریخ میں پہلی بار غیر مسلموں کا مسجد نبوی کا دورہ

 

مسجد نبوی
فوٹو بشکریہ گوگل امیجز

 

حکمران جماعت بی جے پی کی مرکزی وزیر اسمرتی ایرانی کی قیادت میں ہندوستانی وفد نے حال ہی میں مدینہ منورہ کا دورہ کیا۔  یہ دورہ انتہائی اہمیت کا حامل ہے کیونکہ یہ پہلی مرتبہ ہے کہ سعودی حکام سے خصوصی درخواست پر کسی غیر مسلم وفد کو مدینہ منورہ جانے کی اجازت دی گئی ہے۔

یہ دورہ سعودی وزارت حج کے زیر اہتمام بین الاقوامی حج و عمرہ کانفرنس کے موقع پر ہوا۔  8 جنوری کو شروع ہونے والی اور 11 جنوری تک جاری رہنے والی اس کانفرنس میں ہندوستان سمیت 80 سے زائد ممالک کے وزراء اور عہدیداروں نے شرکت کی۔

اپنے دو روزہ دورے کے دوران، وزیر اسمرتی ایرانی، وزیر مملکت برائے امور خارجہ وی مرلی دھرن اور دیگر اعلیٰ حکام کے ساتھ مدینہ میں مسجد نبوی کا دورہ کرنے کا موقع ملا۔  اس تاریخی دورے کی تصدیق خود اسمرتی ایرانی نے سوشل میڈیا پلیٹ فارم X پر مختلف پوسٹس کے ذریعے کی۔ وفد نے کوہ احد اور مسجد قبا کا بھی دورہ کیا، جس کا ثبوت اسمرتی ایرانی کی جانب سے شیئر کی گئی تصاویر سے ملتا ہے، جس میں ایک اور خاتون وزیر نروپما کوٹرو بھی شامل تھیں۔

غور طلب ہے کہ 2021 تک غیر مسلموں کو مدینہ میں داخلے کی اجازت نہیں تھی۔  تاہم قوانین میں نرمی کی وجہ سے اب وہ شہر کے وسط میں واقع مسجد نبوی کے مضافات میں جا سکتے ہیں۔

اسمرتی ایرانی کا سعودی عرب کا دورہ ہندوستان اور سعودی عرب کے درمیان دو طرفہ معاہدے پر دستخط کے فوراً بعد ہوا ہے۔  یہ معاہدہ اس سال کے سالانہ حج کے لیے نئی دہلی کے لیے 175,025 عازمین کا کوٹہ مختص کرتا ہے۔  غیر ملکی میڈیا کے مطابق دو طرفہ حج معاہدے 2024 پر سعودی وزیر حج و عمرہ توفیق بن فوزان الربیعہ کے ساتھ جدہ میں دستخط ہوئے۔