سینیٹ میں انتخابات وقت پر کروانے کی قرارداد منظور

سینیٹ
فوٹو بشکریہ گوگل امیجز

سینیٹ میں انتخابات وقت پر کروانے کی قرارداد منظور

 

سینیٹ
فوٹو بشکریہ گوگل امیجز

 

جماعت اسلامی کے سینیٹر مشتاق احمد خان ایک قرارداد پیش کریں گے جس میں انتخابات کے بروقت انعقاد کی اہمیت پر زور دیا جائے گا۔  یہ سینیٹر دلاور خان کی جانب سے جمعے کو ایوان بالا کی جانب سے انتخابات ملتوی کرنے کی قرارداد کی منظوری کے بعد سامنے آیا ہے۔  تاہم ہفتے کے روز سینیٹ میں ایک تازہ قرارداد پیش کی گئی، جس میں مطالبہ کیا گیا کہ عام انتخابات 8 فروری کی مقررہ تاریخ پر بلا تاخیر کرائے جائیں۔

نئی قرارداد میں اس بات پر روشنی ڈالی گئی ہے کہ انتخابات کا انعقاد آئینی تقاضا ہے اور اس کی ذمہ داری الیکشن کمیشن آف پاکستان اور نگراں حکومت پر عائد کی گئی ہے۔  اس میں جمعہ کو منظور ہونے والی پچھلی قرارداد کو "غیر آئینی اور غیر جمہوری” قرار دیتے ہوئے تنقید کا نشانہ بنایا گیا ہے۔

قرارداد میں اس بات پر زور دیا گیا ہے کہ سپریم کورٹ اور الیکشن کمیشن دونوں نے انتخابات کرانے کا مطالبہ کیا ہے۔  یہ تمام سیاسی جماعتوں کے لیے برابری کے مواقع کو یقینی بنانے کے لیے برابری کے میدان کی ضرورت پر بھی زور دیتا ہے۔

سرکاری ٹی وی پاکستان ٹیلی ویژن کے مطابق جمعہ کو پیش کی گئی قرارداد میں مولانا فضل الرحمان اور دیگر سیاسی رہنماؤں پر حملوں کے علاوہ خیبر پختونخوا اور بلوچستان میں جاری دہشت گردی کی کارروائیوں کا حوالہ دیتے ہوئے ناموافق ماحول کے باعث انتخابی شیڈول کو معطل کرنے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔  مزید برآں، کورونا وائرس کے پھیلاؤ اور چھوٹے صوبوں میں انتخابی مہم چلانے کے لیے مساوی حقوق کی اہمیت کے بارے میں خدشات کا اظہار کیا گیا۔