زرتاج گل کسی کیس میں مطلوب نہیں اور انہیں گرفتار نہیں کیا جائے گا۔سی سی پی او پشاور

زرتاج گل
فوٹو بشکریہ گوگل امیجز

زرتاج گل کسی کیس میں مطلوب نہیں اور انہیں گرفتار نہیں کیا جائے گا۔سی سی پی او پشاور

 

زرتاج گل
فوٹو بشکریہ گوگل امیجز

 

پشاور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس ابراہیم خان نے ہائی کورٹ کے کمرہ نمبر ایک میں زرتاج گل کی درخواست ضمانت کی سماعت کی۔

عدالت میں سی سی پی او پشاور اور ایس ایس پی آپریشنز بھی موجود تھے۔

چیف جسٹس نے انصاف کے عزم کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اگر وہ کسی کو انصاف دلانے میں ناکام رہے تو اپنی مرضی سے استعفیٰ دے دیں گے۔  انہوں نے سوال کیا کہ اگر وہ مداخلت نہ کرتے تو کیا زرتاج گل پوری رات ہائی کورٹ میں گزارنے پر مجبور ہوتیں۔

سی سی پی او پشاور نے عدالت کو یقین دہانی کرائی کہ زرتاج گل کسی کیس میں مطلوب نہیں اور گرفتار نہیں کیا جائے گا۔

چیف جسٹس ابراہیم خان نے وکلاء کے حقوق کے تحفظ کے لیے اپنی لگن پر زور دیتے ہوئے کہا کہ اگر ان میں سے کسی کے ساتھ زیادتی ہوئی تو وہ رات 3 بجے تک عدالتی کارروائی کریں گے۔

درخواست گزار زرتاج گل نے خدشہ ظاہر کیا کہ اگر ضمانت مل جاتی ہے تب بھی انہیں گرفتار کیا جائے گا۔  اس کے جواب میں چیف جسٹس نے انہیں یقین دلایا کہ اگر ایسی صورتحال پیدا ہوتی ہے تو وہ انہیں اور انسپکٹر جنرل آف پولیس کو آگاہ کریں۔

بعد ازاں عدالت نے زرتاج گل کی ضمانت منظور کرتے ہوئے ان کی کسی بھی صورت گرفتاری پر پابندی کا حکم جاری کیا۔