بلاول لاہور میں نون لیگ کے ساتھ کس حلقہ میں سے ایڈجسٹمنٹ کے خواہش مند ہیں مگر مسلم لیگ ن کے رہنماؤں نے اس کی مخالفت کی ہے

بلاول لاہور میں نون لیگ کے ساتھ کس حلقہ میں سے ایڈجسٹمنٹ کے خواہش مند ہیں مگر مسلم لیگ ن کے رہنماؤں نے اس کی مخالفت کی ہے

 

مسلم لیگ ن
فوٹو بشکریہ گوگل امیجز

پاکستان میں عام انتخابات کے لیے کاغذات نامزدگی جمع ہونے کے بعد جوڑ توڑ کی سیاست کا دائرہ ایک بار پھر زور پکڑ رہا ہے۔  پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری لاہور پہنچ گئے ہیں اور انہوں نے بدھ کو پارٹی کی کور کمیٹی سے ملاقات کا شیڈول بنایا ہے۔

دریں اثناء اطلاعات ہیں کہ مسلم لیگ ن اور پیپلز پارٹی کے درمیان سیٹ ایڈجسٹمنٹ کے حوالے سے بات چیت شروع ہو گئی ہے۔  درحقیقت دونوں جماعتوں کے رہنماؤں کے درمیان منگل کی شام لاہور میں ملاقات ہوئی۔

پیپلز پارٹی نے لاہور کے حلقہ این اے 127 میں بلاول بھٹو کی حمایت کی درخواست کی ہے۔  تاہم، پارٹی کے اندر سخت مخالفت ہوئی ہے، اور مسلم لیگ (ن) نے اس سیٹ پر کسی قسم کی ایڈجسٹمنٹ کرنے سے صاف انکار کر دیا ہے۔

مزید برآں، پیپلز پارٹی نے لاہور میں قومی اسمبلی کی نشست کے بدلے کراچی کے حلقہ این اے 242 میں شہباز شریف کی حمایت کرنے پر آمادگی کا عندیہ دیا ہے۔  اس حوالے سے پارٹی کے اندر وسیع بحثیں ہوئی ہیں اور خیال کیا جا رہا ہے کہ کراچی کے اس حلقے میں ایم کیو ایم کی حمایت حاصل کر لی جائے گی۔  اس کے باوجود لاہور سے پیپلز پارٹی کو سیٹیں دینا ہمارے لیے ناممکن ہے۔

خیال رہے کہ مسلم لیگ ن کی جانب سے عطا اللہ تارڑ کو حلقہ این اے 127 کے لیے نامزد کیے جانے کا امکان ہے جس میں ماڈل ٹاؤن، ٹاؤن شپ اور گرین ٹاؤن شامل ہیں۔

مسلم لیگ ن پنجاب کے نائب صدر رانا مشہود نے تصدیق کی کہ پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ ن کے درمیان رابطہ ہوا ہے۔  تاہم انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ پیپلز پارٹی کے مطالبات فی الحال ناقابل عمل ہیں۔  مسلم لیگ ن پنجاب سے اپنی نشستوں پر مزید سمجھوتہ نہیں کر سکتی۔

انہوں نے مزید کہا کہ سیٹ ایڈجسٹمنٹ کی خواہشمند تمام جماعتوں کو اس معاملے کے بارے میں واضح طور پر آگاہ کر دیا گیا ہے۔

سیٹ ایڈجسٹمنٹ کے حوالے سے مسلم لیگ ن کی دیگر سیاسی جماعتوں سے مشاورت اب آخری مراحل میں ہے۔

مزید برآں، منگل کو جاتی امرا میں نواز شریف کی رہائش گاہ پر ایک وسیع اجلاس ہوا۔  اس ملاقات میں پارٹی کے استحکام کی تحریک اور سیٹ ایڈجسٹمنٹ کے معاملے پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا۔