آرمی چیف جنرل عاصم منیر کے دورہ واشنگٹن کے دوران پاکستان تحریک انصاف کے رہنماؤں سے ملاقات

آرمی چیف جنرل عاصم منیر کے دورہ واشنگٹن
فوٹو بشکریہ گوگل امیجز

آرمی چیف جنرل عاصم منیر کے دورہ واشنگٹن کے دوران پاکستان تحریک انصاف کے رہنماؤں سے ملاقات

آرمی چیف جنرل عاصم منیر کے دورہ واشنگٹن
فوٹو بشکریہ گوگل امیجز

 

آرمی چیف جنرل عاصم منیر کے دورہ واشنگٹن کے دوران امریکی حکومت اور فوج کی اہم شخصیات سے ملاقاتیں کیں۔  مزید برآں، اس نے دور دراز علاقوں میں مقیم پاکستانیوں سے ملاقات کے لیے وقت نکالا۔  واشنگٹن میں پاکستانی سفارت خانے نے ان بات چیت کو آسان بنانے کے لیے ایک کمیونٹی ڈنر کا اہتمام کیا۔

جن افراد کو آرمی چیف سے ملاقات کا موقع ملا ان میں ممتاز سرمایہ کار، ڈاکٹرز، آئی ٹی پروفیشنلز، انجینئرز، ماہرین تعلیم، مالیاتی ماہرین اور ماہرین اقتصادیات شامل تھے۔  کچھ پاکستانی نژاد امریکیوں نے جنرل عاصم منیر سے ملاقات کے لیے کیلیفورنیا اور ٹیکساس جیسی دور دراز ریاستوں سے نجی طیاروں میں بھی سفر کیا۔

کمیونٹی ڈنر کے دوران، آرمی چیف نے پاکستانی نژاد آجر تنویر احمد کی جانب سے نیشنل یونیورسٹی آف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کو 9 ملین ڈالر دل کھول کر عطیہ کرنے پر اپنی تعریف کی۔  ڈنر کے بعد تنویر احمد نے ایکس پوسٹ کے ساتھ شیئر کیا کہ 70 سے زائد لوگوں کو آرمی چیف سے ملاقات کا موقع ملا۔  انہوں نے گفتگو کو کھلا اور غیر رسمی قرار دیا، آرمی چیف توجہ سے سنتے اور تسلی بخش جوابات دیتے۔  آرمی چیف سے ملاقات کی خواہش بہت زیادہ تھی، جس کے نتیجے میں پاکستانی سفارت کاروں پر سب کو ایڈجسٹ کرنے کا خاصا دباؤ تھا، جو بدقسمتی سے ممکن نہ ہوسکا۔

جنرل عاصم منیر نے سرکردہ پاکستانی نژاد امریکیوں کی پاکستان میں سرمایہ کاری بڑھانے کی ترغیب دی، انہیں یقین دلایا کہ ان کی سرمایہ کاری کو خصوصی سرمایہ کاری سہولت کونسل کے ذریعے تحفظ فراہم کیا جائے گا۔

مزید برآں، جنرل عاصم منیر نے بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کی تعریف کرتے ہوئے انہیں پاکستان کے سفیر کے طور پر تسلیم کیا جو مختلف شعبوں میں قابل قدر خدمات سرانجام دے رہے ہیں۔  عشائیے میں شریک ایک پاکستانی ڈاکٹر نے بتایا کہ آرمی چیف کے الفاظ سچے ہیں اور پاکستان کے مفادات کے لیے ان کی تشویش کی عکاسی کرتے ہیں۔

عشائیہ میں پاکستان تحریک انصاف کے رہنماؤں نے شرکت کی جنہوں نے امریکی کانگریس میں تحریک انصاف کے قیام کی وکالت کی۔  پی ٹی آئی کی مقامی قیادت نے اس پر کوئی اعتراض نہیں کیا۔  ورجینیا سے پی ٹی آئی کے نمائندے نے بتایا کہ انہیں آرمی چیف کے دورے کے دوران ایسی کسی بھی سرگرمی میں ملوث نہ ہونے کی ہدایت کی گئی تھی۔