پنجاب نگران حکومت کی جانب سے الیکٹرک موٹر سائیکل کن طلبہ کو کن شرائط پہ دیے جائیں گے تفصیل سامنے آگئی

الیکٹرک موٹر سائیکل
فوٹو بشکریہ گوگل امیجز

پنجاب نگران حکومت کی جانب سے الیکٹرک موٹر سائیکل کن طلبہ کو کن شرائط پہ دیے جائیں گے تفصیل سامنے آگئی

الیکٹرک موٹر سائیکل
فوٹو بشکریہ گوگل امیجز

 

نگراں وزیر اعلیٰ پنجاب محسن نقوی کی جانب سے صوبے میں طلباء کو الیکٹرک موٹر سائیکل کی فراہمی کے اعلان کے بعد طلباء میں الیکٹرک موٹر سائیکلیں تقسیم کرنے کا منصوبہ بنایا گیا ہے۔

یہ الیکٹرک بائیکس خصوصی طور پر یونیورسٹیوں اور کالجوں میں داخلہ لینے والے طلباء کو دی جائیں گی، جن کی مالی معاونت بینک آف پنجاب کی طرف سے فراہم کی جائے گی۔

صوبائی وزیر پلاننگ اینڈ ڈویلپمنٹ بلال افضل نے کہا کہ کابینہ کی حتمی منظوری کے لیے قابل عمل تجاویز وزیر اعلیٰ پنجاب کو پیش کی جائیں گی۔  ضروری تجاویز پہلے ہی تیار کر لی گئی ہیں۔

صوبائی سیکرٹری ٹرانسپورٹ جاوید احمدی قاضی نے بتایا کہ ہم نے مارکیٹ میں دستیاب تمام مینوفیکچررز اور ان کی قیمتوں کے حوالے سے اپنی تیاریاں مکمل کر لی ہیں۔  اس پروگرام کے تحت طلباء سے آن لائن درخواستیں قبول کی جائیں گی جس کے بعد قرعہ اندازی کا نظام ہوگا۔

انہوں نے اس عمل میں کالجوں اور یونیورسٹیوں کو شامل کرنے کی اہمیت پر مزید زور دیا، اس بات کو یقینی بناتے ہوئے کہ متعلقہ ادارے ان طلباء کی ضمانت دیں جن کے نام لاٹری میں منتخب کیے گئے ہیں۔  یہ عمل میں شفافیت کو ممکنہ حد تک بڑھا دے گا۔

نئی الیکٹرک بائیک اسکیم بہت کم شرح سود کی پیشکش کرے گی، اور طلباء کو بائک واپس کرنے اور اپنی پڑھائی مکمل کرنے کے بعد موجودہ قیمت کی بنیاد پر رقم واپس وصول کرنے کا اختیار بھی حاصل ہوگا۔

صوبائی وزیر بلال افضل نے روشنی ڈالی کہ اس پروگرام کا بنیادی مقصد ماحولیاتی تحفظ کے اقدامات کرنا ہے۔  جیسے جیسے زیادہ طلباء کالجوں اور یونیورسٹیوں میں سفر کرنے کے لیے الیکٹرک بائک کا انتخاب کرتے ہیں، نقل و حمل کے دیگر طریقوں پر انحصار کم ہوتا جائے گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ اس بات کا بہت خیال رکھا جا رہا ہے کہ طلباء پر کوئی مالی بوجھ نہ پڑے، ساتھ ہی ساتھ سہولت بھی فراہم کی جائے۔  ابتدائی طور پر، اس اسکیم کو یونیورسٹیوں اور کالجوں میں لاگو کیا جائے گا، جس سے مرد اور خواتین دونوں طالب علموں کو مساوی تناسب سے فائدہ پہنچے گا۔

بلال افضل نے اس یقین کا اظہار کیا کہ اسکیم کی حتمی منظوری جنوری میں مل جائے گی۔  سیکرٹری ٹرانسپورٹ کی سربراہی میں ایک وقف ذیلی کمیٹی اپنی کامیابی کو یقینی بنانے کے لیے دن رات محنت کر رہی ہے۔

پنجاب حکومت گرین فنانسنگ کے ذریعے الیکٹرک موٹر بائیکس متعارف کرانے کی تیاری کر رہی ہے، بینک آف پنجاب اس سکیم کو نرم قرض کے آپشن کے طور پر فراہم کر رہا ہے، جس میں 6 فیصد تک شرح سود کی پیشکش کی جا رہی ہے۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ پاکستانی مارکیٹ میں پچھلے کچھ سالوں میں الیکٹرک موٹر بائیکس کے استعمال میں بڑھتے ہوئے رجحان کا مشاہدہ کیا گیا ہے، جس میں 90,000 روپے سے لے کر 400,000 روپے تک کی قیمتوں میں مختلف ماڈلز دستیاب ہیں۔